566

ادارکاری کے ذریعے سماج میں بیداری کا پیغام دینا چاہتا ہوں

ادارکاری کے ذریعے سماج میں بیداری کا پیغام دینا چاہتا ہوں

پاکستان میں اداکاری کے میدان میں جہاں اداکار مستقبل میں نام،شہرت اور پیسہ کمانے کے لیے دن رات ایک کرتے ہیں وہاں پشاور سے تعلق رکھنے والا نصیر احمد پختونیار سماج میں‌تبدیلی یعنی بیداری اور شعور کے لیے اداکاری کرتا ہے اور یوں وہ معاشرے میں اپنا کردار ادا کرتے ہوئے ایک نئی سوچ کا عزم رکھتا ہے.
پشتوں فلموں میں جہاں بےباک کی حدیں‌تھوڑ دی جاتی ہے وہاں نصیر احمد اپنی فلموں میں پشتوں تہذہت اور ثقافت کے فروغ کے لیے دن رات کام کرتا ہے.
یاد رہے نصیر کا تعلق احمد پشاورسے ہے اور وہ پشاور یونیورسٹی سے سوشل ورک پڑھ رہا ہے اور اپنی پڑھائی کے ساتھ ساتھ وہ اداکاری کے ذریعے ہی عوام کو پیغام دینا چاہتا ہے.
نصیر احمد سے گفتگو کے دوران انہوں نے کہا کہ آج کل ہمارے معاشرے میں اداکاری بہت زیادہ پسند کی جاتی ہے جس کے ذریعے ہم عوام کو شعوری اور ایک مثبت پیغام دے سکتے ہیں. عوام بہت شوق سے فلمیں دیکھتے ہیں. ہماری کوشش ہوتی ہے کہ اپنی فلموں میں‌جدید ٹیکنالوجی اور وی ایف ایکس استعمال کر کے عوام کا دل جیتا جائے.
پختونیار فلم پروڈکشن نے پچھلے سال فیس بک پر پشتوں زبان میں فلم بنایا تھا اور فلم کے آخر میں شعوری اور بیداری کا پیغام دیا تھا جس پر عوام کی طرف سے کافی داد ملی. اس پراداکار نصیر احمد پختونیار کا کہنا تھا کہ عوام سے پزیرائی ملنے پر ہمارے حوصلے بلند ہوئے اور ہم نے سوچا کہ سماجی میں تبدیلی کے لیے فلموں کا سہارا لیا جائے اور تب سےہی ہم اس پر کام کررہے ہیں. ہمارا مقصد فلموں میں‌مثبت کردار ادا کرتے ہوئے ایک پیغام دینا ہوتا ہے.
یاد رہے نصیر احمد حالیہ دنوں میں نصیر احمد کی نئی فلم “مجبوری” ریلیز ہوئی اور شائقین کی طرف سے کافی پذیرائی ملی. مجبوری میں مصنف اور ہدایتکار امجد نوید ہے، کیمرہ اور ایڈٹنگ یاسر ملک ہے اور پروڈکشن منیجر احمد خان ہے.

Comments

comments

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں